• To make this place safe and authentic we allow only registered members to participate Registration is easy and will take only 2 minutes of your time PROMISE

وقت سے پہلے ملیں جو تلخیاں مقدور تھیں ۔ زندگی کی ہر خوشی تاخیر کے چکر میں ھے


جس کو دیکھو کال یا تصویر کے چکر میں ھے

عشق بھی تعویذ والے پیر کے چکر میں ھے
ہوش میں مجنوں ملے گا جھنگ کے بازار میں ۔
چھوڑ کر لیلیٰ کو اب وہ ہیر کے چکر میں ھے

اتنا بھی آساں نہیں ھے دل کسی کا جیتنا
پوچھ لے انڈیا سے جو کشمیر کے چکر میں ہے

کل تلک شاعر تھا جو گوشہ نشیں ، خاموش سا
فیس بک پر آج کل تشہیر کے چکر میں ھے ۔۔
حال وہ سنتا نہیں ھے مختصر الفاظ میں

اور دل معصوم یہ تفسیر کے چکر میں ھے ۔
رات پھر روتا ہوا وہ آنکھ میں ہی سو گیا ۔
اک ادھورا خواب جو تعبیر کے چکر میں ھے

وقت سے پہلے ملیں جو تلخیاں مقدور تھیں ۔
زندگی کی ہر خوشی تاخیر کے چکر میں ھے

 
Top