• To make this place safe and authentic we allow only registered members to participate Registration is easy and will take only 2 minutes of your time PROMISE

Information Love or enmity

We have training based on tradition and culture and this resemblance is called love and it is said that his grandfather was like that, his uncle was like that, his mama was like that. This similarity can be very damaging to a child's personality. He thinks that what he is doing is right. Also, because of similarities, his beliefs become very limited and he cannot correct himself. The human unconscious has no mind of its own. He is acting only on the basis of belief. When he hears the words of others that my father was stubborn, he will also become stubborn, if his father lied, he will also lie, etc. After hearing such sentences, he begins to make himself something like this. When he hears a lie, he begins to understand it. Therefore, its correction is not possible.
The love that causes harm in the future is worse than hatred. Someone said, "Even if you have to make enmity, do it with a wise man, at least you will learn something from it." There is a famous saying, "Better a wise enemy than a foolish friend." There is no future, no result, that love is dangerous. A love that saves a child from trouble, a love that allows a child to live for five years even though he is twenty-five years old, such love is harmful. Such love does not allow the child to grow. Such love makes a child a mummy daddy child.


Urdu translation

ہمارے ہاں روایت اور ثقافت کی بنیاد پر تربیت کی جاتی ہے اور اس مماثلت کو محبت کا نام دیا جاتا ہے اور کہا جاتا ہے کہ اس کا دادا بھی ایسے تھا، اس کا چاچا بھی ایسا تھا، اس کا ماما بھی ایسا تھا۔ یہ مماثلت بچے کی شخصیت کو بہت نقصان پہنچاتی ہے۔ وہ یہ سمجھتا ہے کہ وہ جو کچھ کررہا ہے، درست ہے۔ نیز، مماثلت کی وجہ سے اس کے یقین بہت محدود ہوجاتے ہیں اور وہ اپنی اصلاح نہیں کرسکتا۔ انسان کے لاشعور کا اپنا کوئی ذہن نہیں ہوتا۔ وہ صرف یقین کی بنیاد پر چل رہا ہوتا ہے۔ جب وہ دوسروں کے یہ جملے سنتا ہے کہ میرا باپ ضدی تھا تو یہ بھی ضدی بنے گا، اس کا باپ جھوٹ بولتاتھا تو یہ بھی جھوٹ بولے گا، وغیرہ تو ایسے جملے سن سن کر وہ خود کو کچھ ایسا ہی بنانے لگتا ہے۔ وہ جھوٹ سن سن کر اس کو سچ سمجھنا شروع کردیتا ہے۔ لہٰذا اس کی اصلاح ممکن نہیں ر ہتی۔
وہ محبت جو آنے والے وقت میں نقصان کا باعث بنے، وہ نفرت سے بھی بدتر ہے۔ کسی نے کہا کہ ’’اگر دشمنی بھی کرنی ہے تو کسی عقلمند سے کرو، کم از کم اس سے سیکھنے کو تو کچھ ملے گا۔‘‘ کہاوت مشہور ہے، ’’نادان دوست سے بہتر دانا دشمن ہے۔‘‘ جس محبت کا کوئی مستقبل نہیں، جس کا کوئی نتیجہ نہیں ملنا، وہ محبت خطرناک ہے۔ ایسی محبت جو بچے کو مشکلات سے بچائے، ایسی محبت جو بچے کو پچیس سال کا ہونے کا باوجود بھی پانچ سال کا ہی رہنے دے تو ایسی محبت نقصان دہ ہے۔ ایسی محبت بچے کی گرومنگ نہیں ہونے دیتی۔ ایسی محبت بچے کو ممی ڈیڈی چائلڈ بنا دیتی ہے
 
Top