• To make this place safe and authentic we allow only registered members to participate Registration is easy and will take only 2 minutes of your time PROMISE

tariq iqbal haavi

  1. Tariq Iqbal Haavi

    بِلاں دی کہانی (مزاحیہ پنجابی نظم)

    ہیرے دے ہوٹل ول جان ساں میں لگا کم توں آیا روٹی کھان ساں میں لگا سارا دن میں کم کاج چہ لنگھایا سویر دی سی کھادی ٹڈھے پان ساں میں لگا ایہنے وچ ڈاکئے نے واج اک لائی ارانہہ آ گامے تیرے ناویں ڈاک آئی بچے ماں نال رہن نانکے سی گئے میں سمجھیا اوہناں خبر خیر دی گھلائی نٹھ کے میں ڈاکئے دے کول جا کھلوتا...
  2. Tariq Iqbal Haavi

    خزانے لوٹنے والو, یوں خالی ہاتھ جاؤ گے

    ہمارے حال سے غافل، سیاست میں مگن ہو تم نہیں کچھ فکر فردا ہے ملک کیا خاک بچاؤ گے میری اس موت کے منظر میں بھی پیغام ہے تم کو خزانے لوٹنے والو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یوں خالی ہاتھ جاؤ گے (طارق اقبال حاوی)
  3. Tariq Iqbal Haavi

    کبھی جب حق و باطل سے کسی کو چننا پڑ جائے

    کبھی جب حق و باطل سے کسی کو چننا پڑ جائے ڈٹا رہتا ہےحق پر جو، جہاں میں باقی رہتا ہے میں نے سیکھا ہے، دیکھا ہے سرِ حسینؑ سے حاوی کٹ کر بھی جو نیزے پر کلمہء حق ہی کہتا ہے (طارق اقبال حاوی)
  4. Tariq Iqbal Haavi

    اُسی پُرنور سی شب کو، شبِ معراج کہتے ہیں

    سبحان اللہ کیا تھی اُس پار سے، اِس پار کی حسرت کتنی شدت سے تھی محبوب کے دیدار کی حسرت نہ ہو بیاں، کشش کیا تھی، نگاہِ التفات میں بلایا عرش پر اُن کو، فرشتوں کی برات میں بیٹھے براق پر گزرے جہاں سے بھی آقا پیارے پڑھیں درود صف باندھے، ملائک و انبیاء سارے کئے ساکت جہاں سارے، کوئی حرکت نہ ہو حائل...
  5. Tariq Iqbal Haavi

    رہ جانا بس نام خدا دا باقی ہر شے فانی

    رہ جانا بس نام خدا دا باقی ہر شے فانی کفن سوائے ہر شے تیری دُنیا تے رہ جانی **** دو گھڑیاں دی رشتے داری دو گھڑیاں دی یاری عمل اصل بس ساتھی تیرے جنہاں یاری توڑ نبھانی **** چُلھے پاٶنا مال اوہ جیہڑا آئی نوں ٹال نہ پاوے کیتی تیری کمائی اوہ جھلیا کم تیرے نہ آنی **** رب دی من بس، رب دا ہو جا سُچی...
  6. Tariq Iqbal Haavi

    سورج وانگوں مَچدا دِیوا

    سورج وانگوں مَچدا دِیوا بالی رَکھ تُوں سچ دا دِیوا **** حق دی راہ تَوں نہ گبھراویں نَھیری نوں نہیں پَچدا دِیوا **** مِدھیا جاندا پَیراں ہیٹھاں بُجھیا مشکل بَچدا دِیوا **** چانن وَنڈدا چار چفیرے لَو وِچ تُخ کے نچدا دِیوا **** ٹُٹ جاوے تے فیر نہیں جُڑدا دِل ہوندا اے کچ دا دِیوا **** اَزمائشاں دا...
  7. Tariq Iqbal Haavi

    جئے جاٶں ملن کی آرزو میں

    جئے جاٶں ملن کی آرزو میں کٹے دن رات تیری جستجو میں * نہیں اوجھل تو مجھ سے ایک پل بھی تیری صورت ہے گھر کے چارسو میں * اترے کانوں سے دل تک اک شیرینی عجب جادو ہے تیری گفتگو میں * اسے دیکھوں تو بہکوں بن پئے ہی کشش ایسی ہے میرے ہم سُبو میں * کشش غزلوں میں یونہی تو نہیں ہے تو ہے رہتا خیالِ آبرو میں *...
  8. Tariq Iqbal Haavi

    بے لوث سجن جگ تے بس باپ ہی ہوندا اے

    ویلے ماڑے چنگے جیہڑا سدا نال کھلوندا اے بے لوث سجن جگ تے بس باپ ہی ہوندا اے * گھربار چلاون لئی، کی کی نہیں کردا اے سبھ دُکھ تکلیفاں نوں، ہس ہس جردا اے لَکھ فکراں نے وچ زہنے، پر ہس کے وکھاٶندا اے بے لوث سجن جگ تے، بس باپ ہی ہَوندا اے * پھڑ انگلی بچیاں دی، باپ چلن دی مت دیندا دے کے سمجھاں زمانے...
  9. Tariq Iqbal Haavi

    کس سَمت چل پڑی ہے خدائی میرے خدا

    کس سَمت چل پڑی ہے خدائی میرے خدا نفرت ہی دے رہی ہے دِکھائی میرے خدا **** امن و اماں سے خالی دُنیا کیوں ہو گئی تُو نے تَو نہ تھی ایسی بنائی میرے خدا **** ذہنوں پہ اب سوار بس فکرِ معاش ہے مِل جائے کاش بھوک سے رہائی میرے خدا **** جسکا بھی جتنا بھی یہاں چلتا ہے ذور تَو قیامت ہے ہر اُس شخص نے...
  10. Tariq Iqbal Haavi

    ہیں سردیاں پلٹنے کو اب تم بھی پلٹنے کا سوچو

    ہیں سردیاں پلٹنے کو اب تم بھی پلٹنے کا سوچو تنہا گزرے کتنے موسم تم لوٹے نہ میرے ھمدم جن پر ھم سنگ سنگ چلتے تھے وہ راہیں ادھوری ھیں جاناں والہانہ لپٹنے کو تم سے۔۔۔ میری بانہیں ادھوری ھیں جاناں میری آنکھیں رستہ تکتی ہیں اب پتھر بھی ہو سکتی ہیں اب اِتنا مجھے ستاٶ نہ تم جلدی لوٹ کے آٶ نا ہیں سردیاں...
  11. Tariq Iqbal Haavi

    چُسکے لے کے چا پیندا واں

    سنگت بہہ کے چا پیندا واں چُسکے لے کے چا پیندا واں **** اُٹھدا بہندا، چلدا پِھردا میں رہ رہ کے چا پیندا واں **** مُشک تیری میرے سینے اُترے جُوٹھی لے کے چا پیندا واں **** دارُو ورگا کم جے کر دی غم وچ ڈیہہ کے چا پیندا واں **** وچ پردیسے یاد یاراں دی دوری سہہ کے چا پیندا واں **** اگلی وار اوہ نال...
  12. Tariq Iqbal Haavi

    جِنکے لفظوں میں ہیں کنکر، مزاج پتھر ہیں

    جِنکے لفظوں میں ہیں کنکر، مزاج پتھر ہیں ایسے لوگوں کا تو، بس علاج پتھر ہیں **** واہ ری دولت، تو نہ رہی، تو میرے اپنے کبھی جو موم تھے، وہ سارے آج پتھر ہیں **** جس نے اِینٹیں اُٹھا کر، بنایا ہے بیٹا ڈاکٹر اُس مزدور کے تو، سر کا تاج پتھر ہیں **** کسی کا نام لکھنا، اور جھیل میں پھینکے جانا اِن دنوں...
  13. Tariq Iqbal Haavi

    جلا کر نفس کو جگنو، اندھیرا دُور کرتا ھے

    وجود ھے ناتواں، ھمت مگر ضرور کرتا ھے جلا کر نفس کو جگنو، اندھیرا دُور کرتا ھے **** سفرِ تیرگی میں اِک، بھلی اُمید ھے جگنو ظلمت کے نگر میں، ساعتِ سعید ھے جگنو **** کہنے کو یہ جگنو اِک، بہت حقیر پیکر ھے قریب اہلِ نظر کے یہ، مگر فقیر پیکر ھے **** ھے کتنی بے ضرر ھستی، کاسِ مدام ھو کر بھی نہیں شعلہ...
  14. Tariq Iqbal Haavi

    جوگی رنگ وچ، رنگ جا جَھلیا، لگ جا ھُو دے ناویں

    جوگی رنگ وچ، رنگ جا جَھلیا، لگ جا ھُو دے ناویں شاہ رگ تَوں وی، نیڑے مِلسی، جے تُوں جوگ جگاویں مسجد مندر، جھگڑا جگ تے، کوئی وی بھید نہ جانے سچے من نال، اکھ جے مِیٹیں، رب پاویں گا ساہنویں یار منافق، سپ دی فطرت، ڈنگنوں باز نہ آوندے اَگ تے اَگ وے، سیک دیوے گی، بھانویں بالو چھانویں رب دے گھر...
  15. Tariq Iqbal Haavi

    رب میریا کیوں کھو لینا ایں ماواں نوں

    جنت جیہیاں ٹھنڈیاں مِٹھیاں چھانواں نوں رب میریا کیوں کھو لینا ایں ماواں نوں روواں تَک تَک گھر دیاں ساریاں تھانواں نوں رب میریا کیوں کھو لینا ایں ماواں نوں * جھوٹے مُنہ نال سانوں جِھڑکاں ماردی سی رُس کے وی ماں ساڈے کم سنوار دی سی چَیتے کر کر روئیے اُسدی وفاواں نوں رب میریا کیوں کھو لینا ایں ماواں...
  16. Tariq Iqbal Haavi

    ہیں سردیاں پلٹنے کو۔۔۔

    ہیں سردیاں پلٹنے کو۔۔۔ اب تم بھی پلٹنے کا سوچو تنہا گزرے کتنے موسم تم لوٹے نہ میرے ھمدم جن پر ھم سنگ سنگ چلتے تھے وہ راہیں ادھوری ھیں جاناں والہانہ لپٹنے کو تم سے۔۔۔ میری بانہیں ادھوری ھیں جاناں میری آنکھیں رستہ تکتی ہیں اب پتھر بھی ہو سکتی ہیں اب اِتنا مجھے ستاٶ نہ تم جلدی لوٹ کے آٶ نا ہیں...
  17. Tariq Iqbal Haavi

    اپنی بیٹی "مناہل فاطمہ" کے نام پہلے جنم دن پر ایک نظم۔۔۔

    جنم دن کی مبارک ہو، مناہل فاطمہ بیٹی خوش رکھے خدا تم کو، مناہل فاطمہ بیٹی **** اسی دن میرے آنگن میں، خدا نے تم کو بھیجا تھا تیرا چہرہ، تیرا پیکر، بالکل پریوں جیسا تھا کلیوں سی مہک تیری، بسی پھر میری سانسوں میں میرے دل کو ملی ٹھنڈک ، اٹھایا جب تھا ہاتھوں میں ایسی سعادت اس سے پہلے، قسمت نے کہاں دی...
  18. Tariq Iqbal Haavi

    حسن و دولت ہیں عارضی آخر

    حسن و دولت ہیں عارضی آخر خاک ہونی ہے دلکشی آخر نام، منصب، عروج، شہرت بھی سب یہ ہوتے ہیں موسمی آخر کیوں رنجیدہ ہو انکے جانے پر پنچھی ہوتے ہیں ہجرتی آخر ایک جگنو میرا ہم نفس بنا چھٹ گئی ساری تیرگی آخر تلخ گوؤں کی ہار لازم تھی میں نے سادھی تھی خامشی آخر شام مجھ سے ادھار مانگی ہے تم بھی نکلے ہو...
  19. Tariq Iqbal Haavi

    محسنِ پاکستان ”ڈاکٹر عبدالقدیر خان“ کی وفات پر کہا گیا ایک قطعہ۔۔۔

    سبھی اعزاز چھوٹے ہیں تیرے احسان کے آگے بھلا یہ قوم تیرے حق میں کیا اعزاز رکھے گی سلام اے میرے قائد.... تیری ہمت و جرات کو میرے محسن تیری خدمت تجھے ممتاز رکھے گی (طارق اقبال حاوی)
  20. Tariq Iqbal Haavi

    اساتذہ کرام کے عالمی دن پر چندسطریں ۔۔۔

    "استاد ایک ایسی ہستی کا نام ہے جو کہ ایک آفتاب کی مانند ہوتی ہے، اور آفتاب بھی ایسا جو غروب ہونے سے پہلے اپنی ہستی کے ذروں یعنی تعلیمات، خدمات اور تربیت سے حقیر ذروں یعنی شاگردوں میں روشنی بھر کر انہیں روشن ستاروں میں تبدیل کر جاتا ہے" اللہ کریم میرے اساتذہ کرام کو اچھی صحت والی لمبی عمر عطا...
Top